حج سبسڈی ۔ ہندوستانی مسلمانوں کے مشورے پر عمل کیاجائے گا۔

مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور مختار عباس نقوی نے بلاسبسڈی سستا حج اور گلوبل ٹنڈر کے مشورے کو عملی جامعہ پہنانے کا وعدہ کیا‘ امام عمیر احمد الیاسی نے کہاکہ مسلمانوں پر بہت بڑا بوجھ تھا جو اتر گیا‘ چودھری منور سلیم نے کہاکہ مودی حکومت اقلیتی بجٹ میں اضافہ کرے۔


نئی دہلی۔ سپریم کورٹ کی ہدایت پر مودی حکومت کی جانب سے حج سبسڈی ختم کیے جانے پر جس طرح کے مثبت بیانات اور مشورے ائے ہیں اس پر مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور مختار عباس نقوی نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے ملت اسلامیہ ہند کا شکریہ اداکیا ہے اور کہاکہ سبسڈی کے بغیر حج سستا کرایا جائے گا اور گلوبال ٹنڈر والے مشورے کو عملی جامعہ پہنایاجائے گا۔

مسٹر نقوی نے کہاکہ سبسڈی کا فائدہ قطعی طور پر عازمین حج کو نہیں ملتا تھا‘ بلکہ درمیانی لوگوں اور کچھ کمپنیاں اس کا فائدہ اٹھاتی تھیں۔انہوں نے کہاکہ اقلیتی وزارت پہلے ہی اقلیتوں کی فلاح وبہبود کے لئے سرگرم عمل ہے تاہم اب حج سبسڈی کے پیسے ہیں وہ بھی ملت کے نوجوانو اور طالب علموں کو مضبوط کرنے اور انھیں خودکفیل بنانے پر خرچ کیے جائیں گے۔ واضح رہے کہ پہلے حج سبسڈی تقریبا836کروڑ تھی لیکن موجودہ وقت میں ڈھائی سو کروڑ روپے ہی بچی تھی کیونکہ 2012میں سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق سبسڈی آہستہ آہستہ ختم کی جارہی تھی۔

انہوں نے کہاکہ ہم نے امبارکیشن پوائنٹ کی قید کو بھی ختم کردیا ہے چنانچہ جہاں سے عازمین کو سستا سفر لگے وہا ں سے وہ سفر حج پر جاسکتا ہے۔انہوں نے کہاکہ اگر کشمیر سے جانے میں ایک لاکھ پچیس ہزار ہے تودہلی سے یہ سفر صرف50سے55ہزارمیں ہوتا ہے لہذا اگر کوئی یہا ں سے جانا چاہتا ہے تو اس کے لئے آزاد ہے ۔ دوسری جانب آل انڈیا امام آرگنائزیشن کے چیف امام احمد الیاسی نے حج سبسڈی ختم کیے جانے کے فیصلے کا استقبال کیاہے۔

About Sub Editor